کابینہ توسیع میں تاخیر، جے۔ڈی۔یو۔ بی۔جے۔پی۔ سے معاوضہ چاہتی ہے؟

تحریر: سیماب اختر
9199112324

این ڈی اے کی حکومت سازی کے بعد ہی مسلسل تلخ رشتوں کو لیکر جے ڈی یو اور این ڈی اے میں شامل دیگر پارٹیوں کا یہ دعویٰ مسلسل رہا ہے کہ ہمارا اتحاد اٹوٹ ہے اور اس رشتے کو نبھانے کے لیے ہمیشہ سے ہی پرعزم رہے ہیں اور آئندہ بھی رہیں گے لیکن ان دعووں کے ساتھ ساتھ زمینی حقائق سے کسی کو بھی انکار نہیں ہو سکتا کیونکہ وزیر اعلیٰ نتیش کمار ودیگر کے پیش رفت و یقین دہانی کے باوجود اب تک کابینہ کی توسیع میں پینچ پھنسا ہوا ہے پہلے تو کھرماس بہانا تھا لیکن اب کسی اور سیاسی ماس کی تلاش جاری ہے شاید اسی لیے اب تک قلمدان کے تقسیم پر بات نہیں بنی ہے حالانکہ اس دوران کئ بار بی جے پی لیڈران دلی بھی حاضری دے چکے ہیں پھر بھی مسئلہ حل ہوتا نظر نہیں آرہا ہے جب کابینہ کی توسیع کی افواہ اڑی تو خود وزیر اعلیٰ نتیش کمار نے صفائی دیتے ہوئے کہا تھا کہ میڈیا اہلکار پریشان نہ ہوں توسیع کی اطلاع آپ کے ہی توسط سے عوام کو دی جانے گی، لیکن اب تک بات نہیں بنی لیکن اب بھی نتیش کابینہ کے توسیع پر خاموشی چھائی ہوئی ہے۔ عالم یہ ہے کہ اب بی جے پی اور جے ڈی یو کے بڑے لیڈر بھی اس معاملے پر بیانات دینے سے پیچھے ہٹ رہے ہیں۔ ذرائع کے مطابق بہار میں 50–50 کابینہ میں توسیع کی سب سے بڑی رکاوٹ بنی ہوئی ہے۔ جے ڈی یو اب کابینہ میں موجود 50-50 فارمولہ پر قائم ہے۔ اس سے قبل بی جے پی زیاد ہ سیٹوں کی وجہ سے کابینہ میں وزرا کی زیادہ سیٹوں کی حقدار تھی۔ پھر اروناچل معاملہ ہوا اور بی جے پی بیک فٹ پر آگئی۔ اروناچل میں جے ڈی یو کے 6 ایم ایل اے نے بی جے پی میں شمولیت اختیار کی۔ لہذا اب بہار کابینہ میں جے ڈی خود کو ملے ہر غم کا سیاسی بدلہ چاہتی ہے۔
ایک درجن میٹنگ ہوگئی ، ملا کچھ نہیں؟
بی جے پی کابینہ میں توسیع کو لیکر سرگرمی نظر آرہی ہے۔ دہلی سے لیکر بہار تک کے بی جے پی لیڈر نصف درجن سے زیادہ بار وزیر اعلیٰ نتیش کمار کے سات ایک انے مارگ میں ملاقات کر چکے ہیں۔ لیکن اس کے باوجود اب تک توسیع نہیں ہو سکی۔ جے ڈی یو میں رکاوٹ کے پیچھے ایل جے پی بھی ایک بڑی وجہ ہے۔ پارٹی کا خیال ہے کہ جے ڈی یو کی یہ حالت بہار انتخابات میں ایل جے پی کی وجہ سے ہوئی تھی ۔ ایل جے پی بی جے پی کی شراکت دار ہے۔ ایسی صورتحال میں بی جے پی کو اس کا خمیازہ بھگتنا پڑے گا۔ جے ڈی یو ایل جے پی کی وجہ سے تقریبا 35 سیٹوں پر خود کو ہوئے نقصان کا دعویٰ کرتی رہی ہے۔بی جے پی نئے مینڈیٹ کے مطابق کابینہ میں توسیع کرنا چاہتی ہے۔ پارٹی کا کہنا ہے کہ نتیش کمار کو وزیر اعلی کی کرسی سونپی گئی ہے۔ اب کابینہ کے کوٹے کا فیصلہ نمبر کے مطابق ہونا چاہئے۔ سیٹوں کے حساب کے مطابق ہر 7 ممبر اسمبلی پر 2 وزیر بنائے جا سکتے ہیں۔ اس طرح بی جے پی کے20-22 اور جے ڈی یو کے12-14 وزراء کا کوٹہ ممبران اسمبلی کی تعداد کے لحاظ سے طے ہوتا ہے۔ اس میں ایک ۔ ایک وزیر وی آئی پی اور جیتن رام مانجھی کی پارٹی ہم کے ہیں۔ وہیں وزیر اعلی نتیش کمار چاہتے ہیں کہ بی جے پی۔جے ڈی یو 17۔17 اور ہم۔ وی آئی پی کے ایک ۔ ایک ممبر کو کابینہ میں جگہ دی جائے۔
اب یہ بھی کہا جارہا ہے کہ بی جے پی اپنے محکموں سے خوش نہیں ہے۔ وہ تعلیم اور داخلہ جیسے محکمہ اپنے کھاتے میں چاہتی ہے۔ نتیش کابینہ میں فی الحال 14 وزیر ہیں، جس میں بی جے پی سے7،جے ڈی یو سے 5اور ایک ایک ہم اور وی آئی پی سے ہے۔پارٹیوں کے مابین محکموں کو بھی تقسیم کیا گیا ہے۔ اس کے بعد 21 محکموں بی جے پی کے پاس تو20 جے ڈی یو کے پاس ، 2 محکمہ ہم کے پاس اور ایک وی آئی پی کے پاس ہے۔ جے ڈی یو کے پاس داخلہ ، جنرل ایڈمنسٹریشن ، کابینہ ، تعلیم ، توانائی ، آبی وسائل ، دیہی ترقی اور محکمہ دیہی امور جیسے بڑے محکمہ ہیں۔ بی جے پی کے پاس صحت، سڑک، خزانہ، تجارت، پی ایس ای ڈی ، صنعت اور زراعت جیسے محکمہ ہیں۔اس کے بعد بھی انتظار اس بات کا ہے کہ آنے والے دنوں میں اتحاد کا پاس و لحاظ رکھا جاتا ہے یا پھر آپسی رسہ کشی کی وجہ سے ایک ایک وزیر کو پانچ محکموں کی ذمہ داری سنبھالنی ہوگی؟

الدال علیٰ خیر کفاعلہ (شیئر کریں)

ہمارےبارے میں ہماری آواز

ہماری آواز ایک غیر جانبدارانہ نیوز ویب سائٹ ہے جس پر آپ سچی خبروں کے ساتھ ساتھ مذہبی، ملی،قومی، سیاسی، سماجی، ادبی، فکری و اصلاحی مضامین اور شعر وشاعری پڑھ سکتے ہیں۔ یہی نہیں آپ خود بھی ہمیں اپنے پاس پڑوس کی خبریں اور مضامین وغیرہ بھیج سکتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

اک معمہ ہے سمجھنے کا نہ سمجھانے کا

تحریر: کامران غنی صبااسسٹنٹ پروفیسر شعبہ اردو نیتیشور کالج، مظفرپور میں یقین کے ساتھ کہہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے