اف! یہ شخصیت پرستی

ازقلم: محمد عدنان سعیدی رضوی عشقی
کراچی، پاکستان

پچاس ہزار لے کر شام سے صبح تک جب پیران عظام کی شان و عظمت کے قصیدے پڑھے جائیں گے تو پیر صاحب میں بھی ایک چھوٹا سا فرعون و نمرود پیدا ہوجاتا ہے۔
جو پیر صاحب کے پاؤں ذمین پر ٹکنے نہیں دیتا ایک طرف ان پیروں کی جہالت دوسری طرف پیر صاحب کو اپنی شان و عظمت اور القابات کا گھمنڈ اور
تیسری طرف مولوی صاحب کی طرف سے پیر صاحب کے مریدوں کے دلوں میں پیدا کی گئی غلامانہ سوچ۔
جب یہ سارے عوامل ایک ذات میں یکجا ہوتے ہیں تو پھر وہ سمجھتا ھے کہ جو میں کہوں گا وہی دین ہے(العیاذ باللہ)
جو میں چاہوں گا وہی میرے ماننے والوں کے نظریات ہوں گے
جب تک صاحبِ محراب و منبر قرآن و سنت اور عقائدِ صحیحہ بیان کرنے کی بجائے ان دو نمبر مفتی اور دو نمبر پیروں کی جھوٹی شان بیان کرتے رہیں گے۔
میں یقین سے کہتا ہوں کہ فتنوں کا دروازہ اور اہلسنت کے مسلم نظریات پر ڈاکہ ذنی کا سلسلہ بند نہیں ھوگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

الدال علیٰ خیر کفاعلہ (شیئر کریں)

ہمارےبارے میں ہماری آواز

ہماری آواز ایک غیر جانبدارانہ نیوز ویب سائٹ ہے جس پر آپ سچی خبروں کے ساتھ ساتھ مذہبی، ملی،قومی، سیاسی، سماجی، ادبی، فکری و اصلاحی مضامین اور شعر وشاعری پڑھ سکتے ہیں۔ یہی نہیں آپ خود بھی ہمیں اپنے پاس پڑوس کی خبریں اور مضامین وغیرہ بھیج سکتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

آج بھی ہو جو ابراھیم سا ایماں پیدا

تحریر : سراج احمد آرزو حبیبی قربانی عربی زبان کے لفظ(قرب) سے مشتق ہےجسکا معنی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے