نعت پاک: درد کو مرہم بناتے آئے ہیں

نتیجۂ فکر: عاقب چشتی، موتی ہاری (بہار) انڈیا

جی جگر ان پر لٹاتے آئے ہیں
باادب سر کو جھکاتے آئے ہیں

رنج فرقت کو مٹانے کے لیے
ہم دیا شب بھرجلاتے آئے ہیں

ہو کرم کی اک نظر نور مبیں
دیپ یادوں کی جلاتے آئے ہیں

آسمان عشق پر اے سرورا
اشک کے تارے سجاتے آئے ہیں

نعمت کونین ہے درد جگر
درد کو مرہم بناتے آئے ہیں

مل نہیں سکتی انہیں رب کی رضا
باپ ماں کوجو ستاتے آئے ہیں

در پہ عاقب کو بلائیں اب شہا
رسم الفت ہم نبھاتے آئے ہیں

الدال علیٰ خیر کفاعلہ (شیئر کریں)

ہمارےبارے میں ہماری آواز

ہماری آواز ایک غیر جانبدارانہ نیوز ویب سائٹ ہے جس پر آپ سچی خبروں کے ساتھ ساتھ مذہبی، ملی،قومی، سیاسی، سماجی، ادبی، فکری و اصلاحی مضامین اور شعر وشاعری پڑھ سکتے ہیں۔ یہی نہیں آپ خود بھی ہمیں اپنے پاس پڑوس کی خبریں اور مضامین وغیرہ بھیج سکتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

نعت رسول: طائرِ مدینہ تو! لے کے دردِ دل جاتا

مرشدی تاج الشریعہ علیہ الرحمہ کے ایک مصرع پر طبع آزمائی کی کوشش نتیجۂ فکر: …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے