منقبت: بگڑا ہوا نصیبہ بناتے ہیں غوث پاک

نتیجۂ فکر: شاہد رضا رضوی، سنت کبیر نگر

دین نبی کی شمع جلاتے ہیں غوث پاک
بھٹکے ہوؤں کو راہ دکھاتے ہیں غوث پاک

آؤ اے غمزدوں چلو بغداد کو چلیں
بگڑا ہوا نصیبہ بناتے ہیں غوث پاک

غوث الوریٰ نے چور کو ابدال کر دیا
اور اسکو رب کا دوست بناتے ہیں غوث پاک

جس پر پڑی نگاہ کرم ہو گیا ولی
فضل خدا سے رتبہ یہ پاتے ہیں غوث پاک

بارہ برس کی کشتی سلامت نکال دی
رب کی عطاء سے مردے جلاتے ہیں غوث پاک

شاہ جیلاں کی شان سخاوت تو دیکھئے
کھاتی ہے کائنات کھلاتے ہیں غوث پاک

کرتے ہیں ادب اول و آخر ولی سبھی
ولیوں میں ایسا مرتبہ پاتے ہیں غوث پاک

مشکل کشا کی آل ہیں مشکل کشا بھی ہیں
مشکل کو دم میں دور بھگاتے ہیں غوث پاک

منگتوں کو ایک آن میں سلطان کر دیا
فیض و کرم کا دریا بہاتے ہیں غوث پاک

جو لوگ بھی سجاتے ہیں بزم انکی دھوم سے
ان عاشقوں کے گھر میں بھی آتے ہیں غوث پاک

مشکل میں انکا نام میں لیتا ہوں اس لئے
مشکل کو میری آساں بناتے ہیں غوث پاک

شاہد نہ غمزدہ رہو بس نام ان کا لو
گرتے ہوؤں کو تھامنے آتے ہیں غوث پاک

الدال علیٰ خیر کفاعلہ (شیئر کریں)

ہمارےبارے میں ہماری آواز

ہماری آواز ایک غیر جانبدارانہ نیوز ویب سائٹ ہے جس پر آپ سچی خبروں کے ساتھ ساتھ مذہبی، ملی،قومی، سیاسی، سماجی، ادبی، فکری و اصلاحی مضامین اور شعر وشاعری پڑھ سکتے ہیں۔ یہی نہیں آپ خود بھی ہمیں اپنے پاس پڑوس کی خبریں اور مضامین وغیرہ بھیج سکتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

نعت : مرے مصطفے ہیں زمانے سے پہلے

رشحات قلم : شمس الحق علیمی مہراج گنج ادب سے رہو طیبہ آنے سے پہلےشہِ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے