مقاصد شریعت

تحریر: ابوالمتبسِّم ایازاحمد عطاری
پاکستان

👈 انسان کی معاشرتی زندگی میں متعدد نظریات و قوانین بنائیں گئے ہیں۔ہر قوم نے اپنے حالات کے حساب سے اپنی اجتماعی زندگی گزارنے کیلئے اصول متعین کیے۔اور جُوں جُوں ترقی ہوتی گئ قوانین میں بھی تبدیلی ہوتی گئ۔اور یہ اصول اپنی خواہشات کے مطابق بنائے گئے تھے۔جس کی وجہ سے انسان کو بڑے نقصان کا سامنا کرنا پڑا۔مگر اسلام نے بنیادی انسانی حقوق 5 قسم کے تحفظات دیے۔

1️⃣ زندگی کا حق :-
انسان کی حیوانیت پرستی ، اللہ تعالی کا انکار ، اور بے مقصد زندگی کی وجہ سے جو شروع سے لیکر اب تک مثالیں قائم کیں ہیں وہ انتہائ المناک ہیں۔جنگ و جدل کو اپنا پیشہ سمجھنا۔اور اپنی ذات کیلئے لڑنا۔لیکن اسلامی معاشرتی کی بنیاد جن احکام پر مشتمل ہے ان میں پہلی دفعہ انسان کی جان اور اس کا خون محرم قرار دیا۔حرمت نفس کی جو مئوثر تعلیم اسلام نے دی ہے وہ کسی اور مذہب اور قانون میں نہیں ہے۔

2️⃣ مال کی حفاظت :-
ابتدائی دور انسانیت میں اشتراکیت کا دور تھا۔اس دور میں انسانی ذاتی ملکیت کا مالک نہیں ہوتا تھا۔بلکہ تمام چیزیں مشترکہ ہوا کرتی تھی۔سب لوگ برابر کے مالک ہوا کرتے تھے۔تو وہ چیز ریاست کو دی جاتی تھی۔افراد سے ذاتی ملکت کے تمام حقوق چھین لیے جاتے تھے۔جبکہ اسلام واضح طور پر انفرادی ملکیت کا تصور دیتا ہے۔

3️⃣ عزت کی حفاظت :-
نصرانیت انسان کی پیدائش کو گنہگار کہتی ہے۔یہ انسان کو اس وقت تک پاک نہیں کہتی تھی جب تک کفارہ نہ دے دے۔نصاری انسان کو ایک گھٹیا شمار کرتے تھے۔اسی طرح دیگر مذاہب میں بھی انسان کی اہمیت نہیں تھی۔جب کہ تمام عالم میں صرف اسلام ہی ایسا مذہب ہے جس سے انسان کو تمام مخلوقات پر برتی عطا کی ہے۔

4️⃣ نجی زندگی کا تحفظ :-
اسلام ہر شخص کو نجی زندگی کا تحفظ دیتا ہے کہ وہ اپنی زندگی اپنے مطابق گزارے۔کسی ریاست کو اجازت نہیں ہے کہ وہ ان کی نجی زندگی میں دخل اندازی کریں۔

5️⃣ رسموں کی حفاظت :-
زمانہ جاہلیت میں مختلف قسم کے پیروکار موجود تھے۔مذہبی مخالفت عروج پہ تھی۔کسی مذہب کو غلط بولنے کا تصور نہیں تھا۔مذہب کی آڑ میں ان کے پاسبانوں کی نگاہ میں انسانی جان کی کوئ قیمت ہی نہیں رہی ہے۔لیکن اسلامی قانون میں غیر مسلم شہریوں کو اپنے مذہبی فرائض بجالانے کی آزادی ہے۔ان کے مذہبی معاملات میں کسی قسم کی پابندی نہیں ہے۔

الدال علیٰ خیر کفاعلہ (شیئر کریں)

ہمارےبارے میں ہماری آواز

ہماری آواز ایک غیر جانبدارانہ نیوز ویب سائٹ ہے جس پر آپ سچی خبروں کے ساتھ ساتھ مذہبی، ملی،قومی، سیاسی، سماجی، ادبی، فکری و اصلاحی مضامین اور شعر وشاعری پڑھ سکتے ہیں۔ یہی نہیں آپ خود بھی ہمیں اپنے پاس پڑوس کی خبریں اور مضامین وغیرہ بھیج سکتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

آج بھی ہو جو ابراھیم سا ایماں پیدا

تحریر : سراج احمد آرزو حبیبی قربانی عربی زبان کے لفظ(قرب) سے مشتق ہےجسکا معنی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے