کرکٹروں کی بیف پارٹی پر سناٹا کیوں؟

تحریر: غلام مصطفےٰ نعیمی
مدیر اعلیٰ سواد اعظم دہلی

آپ کب کیا کھانا چاہتے ہیں یہ آپ کا نجی اور ذاتی معاملہ ہے۔ پوری دنیا میں اسے انسان کا بنیادی حق مانا گیا ہے لیکن ہمارے دیس میں کیا کھانا ہے یہ آپ نہیں حکومت طے کرتی ہے۔حکومت کی اسی نفرتی پالیسی کی وجہ سے گلی کوچوں میں نفرتی چِنٹُوؤں کی ٹولیاں بے موسم گھاس کی طرح اُگ آئی ہیں جو ہر کسی کے کھانے/دانے کو چیک کرتے گھومتے ہیں۔انہیں چند بھکتوں کے نشانے پر ان دنوں انڈین کرکٹ ٹیم کے نائب کپتان روہت شرما آگئے ہیں۔انڈین کرکٹ ٹیم ان دنوں آسٹریلیائی ٹور پر ہے۔جہاں کورونا پابندیوں کے درمیان کرکٹ کھیلی جارہی ہے۔اس درمیان ٹیم کے پانچ کھلاڑی کورونا پروٹوکول کے خلاف ایک ہوٹل میں کھانا کھاتے نظر آئے۔ان کی بدقسمتی کہ ہوٹل کا بِل (Bill) وائرل ہوگیا۔بِل کے مطابق ان کھلاڑیوں نے بیف (گائے) اور خنزیر (pork) کا گوشت کھایا تھا۔خنزیر کے گوشت پر شاید بھکتوں کو اعتراض نہ ہوتا لیکن بیف کا نام آتے ہی کچھ پکے اندھ بھکتوں کا پارہ چڑھ گیا اور انہوں نے سوشل میڈیا پر ہی کھلاڑیوں کو کھری کھوٹی سنانا شروع کردی۔حالانکہ میڈیا اور سیاست دانوں نے اس معاملے کو ایسے ہضم کرلیا جیسے کچھ ہوا ہی نہیں تھا۔خدا نخواستہ اگر کوئی مسلم کھلاڑی بیف کھا لیتا تو اب تک میڈیا اور سیاست دان اس پر چڑھائی کر چکے ہوتے مگر یہاں بیف کھانے والوں میں اپنے ہی لوگ شامل تھے اس لیے ساری خبر کو بغیر پانی کے ہی گلے سے اتار لیا گیا۔

بھکت بننے کا ایک بڑا نقصان یہ ہوتا ہے کہ آپ کا دل ودماغ دوسرے کے قبضے میں چلا جاتاہے اور آپ اپنے سوچنے سمجھنے کی طاقت کھو بیٹھتے ہیں۔اس کے بعد بھکت وہی دیکھتا ہے جو اس کا سوامی اور آقا اسے دکھانا چاہتا ہے۔ایسے ہی کچھ سوامیوں اور آقاؤں نے اپنے بھکتوں کے دماغ میں یہ بات بٹھا رکھی ہے کہ بھارت ایک شاکاہاری (سبزی خور) دیس ہے۔بس مسلمان ہی گوشت خور ہیں۔جبکہ حقیقت اس کے خلاف ہے۔سیمپل رجسٹریشن سسٹم بیس لائن سروے کے مطابق بھارت میں 71؍فیصد لوگ گوشت کھاتے ہیں۔حکومتی رپورٹ کے مطابق بھارت میں مسلمانوں کی کل آبادی 14.23؍ فیصد ہے۔اگر مسلمانوں کی کل آبادی کو گوشت خور مان لیا جائے تو باقی 85.77؍فیصد غیر مسلم آبادی بچتی ہے۔اس پچاسی فیصد آبادی میں 56.77؍ فیصد غیر مسلم آبادی گوشت خور ہے۔یعنی گوشت نہ کھانے والوں کی تعداد محض 29؍ فیصدہے۔کس صوبے میں کتنے فیصد لوگ گوشت کھاتے ہیں اس فہرست میں ملاحظہ کریں:
🔹آندھرا پردیش: 98.25
🔹تلنگانہ: 98.7
🔹تمل ناڈو: 97.65
🔹اڈیشہ: 97.35
🔹کیرل: 97
🔹بہار: 92.45
🔹چھتیس گڑھ: 82.05
🔹بنگال: 79.4
🔹آسام: 79.4
🔹جھارکھنڈ: 79.4
🔹کرناٹک: 78.9
🔹اتراکھنڈ: 72.65
🔹مہاراشٹر: 59.8
🔹دلّی: 60.5
🔹یوپی: 52.9
🔹ایم پی: 49.4
🔹گجرات: 39.05
🔹پنجاب: 33.25
🔹ہریانہ: 30.75

ان تمام صوبوں میں آسام، بنگال اور یوپی میں مسلم آبادی ۲۰؍تا ۳۰؍ فیصد ہے باقی دیگر صوبوں میں مسلم آبادی ۲؍ سے ۱۳؍ فیصد کے درمیان ہے لیکن ان صوبوں میں گوشت کھانے والوں کی تعداد ۳۰؍ فیصد سے ۹۸؍ فیصد تک ہے۔اب بھکت جَن سوچ کر بتائیں کہ مسلمانوں کے علاوہ اتنی بڑی غیر مسلم آبادی گوشت کیوں کھاتی ہے؟
گوشت کے نام پر مسلمانوں کے جان و مال لوٹنے والے بھکت، ٹی وی پر نوٹنکی کرنے والے اینکر اور گئو ماتا کی قسمیں کھانے والے نیتا کرکٹروں کی گوشت خوری پر کیوں خاموش ہیں؟

اسے ہمارے دیس کی بدقسمتی ہی کہا جائے گا کہ اکیسویں صدی میں بھی ہمارے یہاں کھانے پینے کی بنیاد پر نفرت اور سیاست کی جاتی ہے۔کھانا پینا ہر انسان کا بے حد نجی اور ذاتی معاملہ ہے لیکن مسلمانوں سے نفرت اور سیاسی نفع کے لالچ میں کھانے پینے کو بھی دشمنی نکالنے کا ذریعہ بنا لیا گیا ہے۔حالیہ واقعہ سے یہ بات نہایت واضح طور پر ثابت ہوجاتی ہے کہ اس ملک کے غیر مسلم بھی اول درجے کے گوشت خور ہیں۔گودی میڈیا اوربھکتوں کو چاہیے کہ جس طرح مسلمانوں کے خلاف شور مچاتے ہیں ویسی ہی مہم دیگر گوشت خوروں کے خلاف بھی چلائیں، ورنہ اپنی آنکھوں سے بھکتی کا چشمہ اتار دیں اور ملکی امن وامان کو برباد نہ کریں۔

الدال علیٰ خیر کفاعلہ (شیئر کریں)

ہمارےبارے میں ہماری آواز

ہماری آواز ایک غیر جانبدارانہ نیوز ویب سائٹ ہے جس پر آپ سچی خبروں کے ساتھ ساتھ مذہبی، ملی،قومی، سیاسی، سماجی، ادبی، فکری و اصلاحی مضامین اور شعر وشاعری پڑھ سکتے ہیں۔ یہی نہیں آپ خود بھی ہمیں اپنے پاس پڑوس کی خبریں اور مضامین وغیرہ بھیج سکتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

کورونا وائرس پر قابو پانے کے لیے لاک ڈاؤن کا نفاذ ضروری نہیں ہے

ساجد محمود شیخ، میرا روڈ مکرمی!مہاراشٹر کے وزیراعلی ادھو ٹھاکرے نے ایک بار پھر سخت …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے