مرکزی حکومت کسانوں سے بے نیاز ہے: اشوک گہلوت

جے پور: 3 جنوری (اے۔این۔آئی۔): راجستھان کے وزیر اعلیٰ اشوک گہلوت نے اتوار کے روز کہا کہ دہلی میں گذشتہ 39 دنوں سے کسان سردی کی لپیٹ میں ہیں۔ وہ حال ہی میں نافذ زرعی قوانین کے خلاف احتجاج کر رہے ہیں لیکن مرکزی حکومت "بے حس” ہے۔
گہلوت نے جے پور میں کانگریس پارٹی کے زیر اہتمام منعقدہ ایک احتجاجی میٹنگ میں ایک اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہا: سوال یہ ہے کہ ملک کے کسانوں کی قسمت کا تعین کیا جائے گا؟ حکومت کو لگتا ہے کہ صرف ہریانہ اور پنجاب کے کسان احتجاج میں بیٹھے ہیں۔ ملک کے 6.5 لاکھ دیہاتوں میں کسان احتجاج کرنے والے کسانوں سے اظہار یکجہتی کرتے ہیں۔
گہلوت نے مزید کہا کہ راجستھان حکومت ریاست کے کسانوں پر مرکزی زرعی قوانین کے اثر کو کم کرنے کے لیے ریاست میں زرعی بل لائے گی۔
"ہم کسانوں کے ساتھ ہیں۔ صورتحال انتہائی سنگین ہے کیونکہ ملک کے 86 فیصد سے زیادہ کسانوں کے پاس 5 ایکڑ سے بھی کم اراضی ہے۔ اوسطا ان کے پاس صرف دو ایکڑ اراضی ہے۔ راجستھان حکومت ریاست کے لیے ایک زرعی بل لائے گی۔
گہلوت نے مزید کہا کہ ہندوستان کے لوگ بہت ذہین ہیں اور انہیں جمہوری نظام کے تحت حتمی اختیار حاصل ہے۔
"ہندوستان کے لوگ بہت سمجھدار ہیں چاہے وہ کم تعلیم یافتہ ہوں۔ یہاں تک کہ بنگلہ دیش میں آزادی دلانے والے اندرا جی (سابق وزیر اعظم اندرا گاندھی) کو بھی 1977 میں شکست ہوئی تھی۔ لیکن تین سالوں میں وہ اکثریت سے اقتدار میں لوٹ آئیں۔”

الدال علیٰ خیر کفاعلہ (شیئر کریں)

ہمارےبارے میں ہماری آواز

ہماری آواز ایک غیر جانبدارانہ نیوز ویب سائٹ ہے جس پر آپ سچی خبروں کے ساتھ ساتھ مذہبی، ملی،قومی، سیاسی، سماجی، ادبی، فکری و اصلاحی مضامین اور شعر وشاعری پڑھ سکتے ہیں۔ یہی نہیں آپ خود بھی ہمیں اپنے پاس پڑوس کی خبریں اور مضامین وغیرہ بھیج سکتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

سفرِ باسنی راجستھان کے نقوش کی سنی تبلیغی جماعت سے اشاعت

’’باسنی: روشن صبحیں-مہکتی شامیں” باسنی: 26 مارچ، ہماری آواز(پریس ریلیز) مورخہ ۲۳؍ جنوری ۲۰۲۱ء کو …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے