ڈی۔ڈی۔سی۔ انتخاب: گُپکار بنی عظیم اتحاد، مگر بی۔جے۔پی۔ ریاست کی سب سے بڑی پارٹی

جموں: ہماری آواز (ایجنسی) 23دسمبر// جموں وکشمیر میں ضلعی ترقیاتی کونسل (ڈی ڈی سی) کے انتخابات میں منگل کے روز اعلان کردہ نتائج میں نیشنل کانفرنس-پی ڈی پی سمیت سات جماعتوں کے گپ کار اتحاد ووٹوں کی گنتی کے معاملے میں بھارتیہ جنتا پارٹی کے بالمقابل اچھی خاصی زیادتی حاصل کی۔ تاہم بی۔ جے۔پی۔ کے لیے بھی یہ نتائج کئی طریقوں سے خاص اور حوصلہ افزا ہیں۔جہاں پارٹی نے آرٹیکل 370 کے بعد پہلے انتخابات میں وادی کشمیر میں تین نشستوں پر کامیابی حاصل کی،وہیں بی۔جے۔پی۔ پہلی بار جموں و کشمیر کی سب سے بڑی پارٹی بن کر سامنے آئی۔
ڈی ڈی سی کی 280 نشستوں کے لئے آٹھ مرحلوںمیں انتخابات ہوئے۔ یونین کے علاقے کے 20 اضلاع میں 14 سیٹیں ہیں۔ ڈی ڈی سی انتخاب کو علاقے میں بی جے پی اور دیگر سیاسی جماعتوں کے مابین مقابلے کی حیثیت سے دیکھا جاتا ہے۔ گذشتہ سال اگست میں آرٹیکل 370 کو منسوخ کرنے کے بعد جموں و کشمیر میں یہ پہلا الیکشن ہے۔پہلے مرحلے میں ووٹنگ 28 نومبر کو ہوئی تھی اور آٹھویں اور آخری مرحلہ 19 دسمبر کو ہوا تھا۔ امن کے ساتھ اختتام پذیر انتخابات میں مجموعی طور پر 57 لاکھ اہل ووٹرز میں سے 51 فیصد نے اپنے حق رائے دہی کا استعمال کیا۔ کشمیر پر مبنی مرکزی دھارے کی سات سیاسی جماعتوں نے منشور الائنس (پی اے جی ڈی) کے بینر تلے خفیہ طور پر انتخاب لڑا تھا۔ ان جماعتوں میں نیشنل کانفرنس اور پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی بھی شامل ہیں۔ابتدا میں کانگریس بھی پی اے جی ڈی کا حصہ تھی ، لیکن بعد میں اس نے اتحاد سے خود کو دور کردیا کیونکہ بی جے پی نے حزب اختلاف کی جماعتوں کو "خفیہ گروہوں” کا نشانہ بنایا۔ وہ پی اے جی ڈی کے ساتھ اس کا معاہدہ تھا۔

الدال علیٰ خیر کفاعلہ (شیئر کریں)

ہمارےبارے میں ہماری آواز

ہماری آواز ایک غیر جانبدارانہ نیوز ویب سائٹ ہے جس پر آپ سچی خبروں کے ساتھ ساتھ مذہبی، ملی،قومی، سیاسی، سماجی، ادبی، فکری و اصلاحی مضامین اور شعر وشاعری پڑھ سکتے ہیں۔ یہی نہیں آپ خود بھی ہمیں اپنے پاس پڑوس کی خبریں اور مضامین وغیرہ بھیج سکتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

کشمیریوں کے ساتھ نام نہاد اظہار قومی یک جہتی

دہشت گردی کے مینو فیکچرر، سپلائر اور ایکسپورٹر پاکستان کا کشمیری عوام کے ساتھ فراڈ!آئیے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے